خبرنامہ

‘دھرنے میں صرف عمران نہیں، بڑے بڑے کردار شامل، وقت آنے پر بتاؤں گا’

لاہور: مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف نے جمہوریت کے تسلسل کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے اپنی ذات کی نفی (مائنس فارمولا) کو ذہنی طورپر قبول کرلیا۔ باوثوق لیگی ذرائع نے بتایا ہے کہ مسلم لیگ ن کی اعلیٰ قیادت نے عام انتخابات کے بروقت انعقاد کے سلسلے میں نئی حکمت عملی طے کی ہے جب کہ نواز شریف نے اپنی ذات کی نفی (مائنس فارمولا) کو ذہنی طورپر قبول کرلیا ہے۔ نواز شریف نیب اور عدالتوں میں جاری کیسز کی متوقع سزائیں بھی باعمل پارٹی پالیسی قبول کریں گے تاہم امن وامان کی صورت حال کو برقرار رکھتے ہوئے عوام کا احتجاجی کال دینے سے گریز کیا جائے گا۔

‘دھرنے میں صرف عمران نہیں، بڑے بڑے کردار شامل، وقت آنے پر بتاؤں گا’

اسلام آباد: (ملت آن لائن) نوازشریف نے تحریک انصاف پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا پی ٹی آئی پگڑیاں اچھالنے اور ایمپائر کی انگلی کی طرف دیکھنے والی جماعت ہے، اس نے دھرنوں کے علاوہ کچھ نہیں کیا۔ انہون نے کہا عمران خان، طاہرالقادری کے ساتھ دھرنے کے دیگر کئی کرداروں کا وقت آنے پر بتاؤں گا۔

احتساب عدالت میں پیشی سے قبل سابق وزیراعظم سے غیر رسمی گفتگو میں صحافی نے سوال کیا کہ تحریک انصاف نے آپ کی قومی کمیشن بنانے کی تجویز مسترد کردی ہے، جس پر نوازشریف نے کہا کہ پی ٹی آئی کا نہ کوئی کردار ہے، نہ نظریہ، کیونکہ پی ٹی آئی پگڑی اچھال اور گندی زبان استعمال کرنے والی پارٹی ہے۔ نوازشریف کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی میں ووٹ کو عزت دینے کی کوئی بات نہیں، اچھا ہوا جو خیبرپختونخوا میں تحریک انصاف کی حکومت تھی، وہاں کی عوام نے تبدیلی دیکھ لی،سب سامنے آ گیا ہے۔

سابق وزیراعظم نے تحریک انصاف کو ‘دھرنے دو’جماعت کا نام دیا اور کہا کہ دھرنے میں صرف عمران خان نہیں، طاہرالقادری اور بڑے بڑے کردار ہیں۔ صحافی نے کہا کہ کھل کربتائیں کرداروں میں کون کون ہے جس پر نوازشریف نے کہا کہ وہ یہ چیزیں وقت آنے پر بتائیں گے۔