خبرنامہ

زلفی بخاری کابلیک لسٹ میں نام ڈالنےکااقدام چیلنج کرنےکافیصلہ

عمران خان کے قریبی دوست زلفی بخاری نے اپنا نام بلیک لسٹ میں ڈالنےکےاقدام کوچیلنج کرنےکا فیصلہ کیاہے۔

ذرائع کےمطابق زلفی بخاری جلد اسلام آباد ہائی کورٹ سےاس معاملےپر رجوع کریں گے۔ زلفی بخاری نےاپنے قانونی معاونین سے مشاورت مکمل کر لی ہے۔

زلفی بخاری کاکہناتھاکہ میرا نام بلیک لسٹ میں ڈالنےکا اقدام بدنیتی پرمبنی ہے۔عدالت سے سرخرو ہوکرنکلوں گا۔ انھوں نے خدشہ ظاہر کیاکہ عمران خان سے دوستی کی وجہ سےٹارگٹ کیا جا رہا ہے۔

اس سے قبل نگران وزیراعظم جسٹس (ر) ناصر الملک نے زلفی بخاری کا نام بلیک لسٹ سے نکالنے کے معاملے پروزارت داخلہ سے رپورٹ طلب کرلی ۔ دوروز قبل پی ٹی آئی کے سرابرہ عمران خان کے دوست سید ذوالفقارعباس بخاری عرف زلفی بخاری کا نام لسٹ میں شامل ہونے کے باوجود انہیں بیرون ملک جانے کی اجازت دے دی گئی تھی۔ وزارت داخلہ نےبتایاکہ زلفی بخاری کانام ای سی ایل میں شامل نہیں تھا۔ای سی ایل سےنام عدالتی فیصلوں کی روشنی میں نکالاجاتاہے۔

زلفی بخاری نے عمران خان کےساتھ عمرےپرجانےکےلیے ای سی ایل سے نام نکلوایا تھا۔ان کاکہناتھاکہ وہ سعودی عرب سے عمران خان کے ہمراہ پاکستان آئیں گے۔ انھوں نے بتایاکہ نیب میں بیان ریکارڈنہ کرنےپرنام بلیک لسٹ میں داخل کیاگیا۔ زلفی بخاری نے نیب کوتحریری طورپرتمام صورتحال سےآگاہ کردیاہے۔ انھوں نے مزید کہاکہ اس صورتحال سے بھاگنےوالوں میں سےنہیں ہوں۔